8

کیا حکومت نیا اے جی پی منتخب کرنے سے قاصر ہے، سپریم کورٹ

سپریم کورٹ آف پاکستان۔  ایس سی پی کی ویب سائٹ
سپریم کورٹ آف پاکستان۔ ایس سی پی کی ویب سائٹ

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے حکومت کی نااہلی پر سخت استثنیٰ لے لیا۔ پاکستان کے لیے نئے اٹارنی جنرل کا تقرر اور مشاہدہ کیا کہ حکومت آئینی عہدہ نہ بھر کر آئین کی خلاف ورزی کر رہی ہے۔

سپریم کورٹ کے سینئر ترین جج جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے ٹیمپرڈ گاڑی سے متعلق کیس کی سماعت کرنے والے تین رکنی بینچ کی سربراہی کرتے ہوئے نئے اٹارنی جنرل کی تقرری میں حکومت کی تاخیر پر ایک بار پھر برہمی کا اظہار کیا۔

فاضل جج نے ڈپٹی اٹارنی جنرل سے پوچھا کہ اس وقت اٹارنی جنرل کون ہے اور سوال کیا کہ کیا حکومت اتنی نااہل ہے کہ نئے اٹارنی جنرل کا تقرر نہیں کر سکتی۔

لا افسر تسلی بخش جواب نہ دے سکے تو جسٹس عیسیٰ نے ریمارکس دیئے کہ ڈپٹی اٹارنی جنرل ایسے کام کر رہے ہیں جیسے عدالت نے کوئی مشکل آئینی سوال پوچھا ہو۔

جسٹس عیسیٰ نے لاء آفیسر سے پوچھا کہ کیا حکومت آئینی عہدے (اے جی) کی تقرری پر کسی سے مذاکرات کر رہی ہے؟ جسٹس عیسیٰ نے ریمارکس دیئے کہ سپریم کورٹ کے پاس 5500 کے قریب وکلا موجود ہیں لیکن حکومت ابھی تک اٹارنی جنرل کے عہدے کے لیے ایک وکیل کا انتخاب نہیں کر سکی۔

فاضل جج نے ریمارکس دیے کہ حکومت اٹارنی جنرل کا آئینی عہدہ نہ بھر کر آئین کی خلاف ورزی کر رہی ہے، عدالت عظمیٰ کے احکامات کی تعمیل نہیں کی گئی۔

جسٹس عیسیٰ نے مزید ریمارکس دیئے کہ ڈپٹی اٹارنی جنرل اور ایڈیشنل اٹارنی جنرل کو صرف اٹارنی جنرل سے ہدایات لینے کی ضرورت ہے، ‘ڈپٹی اور ایڈیشنل اٹارنی جنرلز کا اٹارنی جنرل کی ہدایات کے بغیر عدالت میں پیش ہونا غیر قانونی ہے’۔

واضح رہے کہ گزشتہ ہفتے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے اٹارنی جنرل کی تقرری میں تاخیر کا نوٹس لیتے ہوئے سبکدوش ہونے والے اے جی اشتر اوصاف کے استعفیٰ اور نئے اٹارنی جنرل کی تقرری کا ریکارڈ 17 جنوری تک طلب کیا تھا۔ عدالت کے حکم کی تعمیل نہیں کی۔

فاضل جج نے اٹارنی جنرل کے دفتر کی جانب سے عدم تعاون کا نوٹس لیا تھا اور کہا تھا کہ عدالت کو اے جی آفس سے مقدمات میں معاونت نہیں مل رہی۔ اشتر اوصاف کے استعفیٰ کے بعدصدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے دسمبر 2022 میں منصور عثمان کو نیا اے جی تعینات کرنے کی منظوری دی تھی۔ تاہم اس کا نوٹیفکیشن جاری نہیں کیا گیا۔

حال ہی میں، منصور اعوان نے بھی ماننے سے انکار کر دیا۔ پیشہ ورانہ مصروفیات کی وجہ سے اٹارنی جنرل کا عہدہ۔ وفاقی وزیر قانون و انصاف سینیٹر اعظم نذیر تارڑ نے چند روز قبل اس مصنف کو بتایا تھا کہ جلد ہی نئے اٹارنی جنرل کی تقرری ہو جائے گی، انہوں نے مزید کہا کہ نئے اٹارنی جنرل کی تقرری پر بات چیت کے لیے وہ وزیراعظم شہباز شریف سے ملاقات کرنے جا رہے ہیں۔



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں