13

پی ٹی ای اے کا کہنا ہے کہ پاکستانی ٹیکسٹائل کی برآمدات میں 500 ملین ڈالر کے اضافے کا امکان ہے۔

فیصل آباد: جرمنی میں ٹیکسٹائل کی عالمی نمائش ‘ہیم ٹیکسٹائل’ سے موصول ہونے والے 500 ملین ڈالر کے برآمدی آرڈرز سے پاکستان کی ٹیکسٹائل برآمدات میں بہتری کی توقع ہے۔

تاہم وقت کی ضرورت ہے کہ حکومت خام مال کی قلت پر قابو پائے اور ٹیکسٹائل انڈسٹری کو درپیش سوت کی قیمتوں میں اضافہ کرے تاکہ برآمد کنندگان کو جلد از جلد 150 ارب روپے سے زائد کے ریفنڈز کی ادائیگی ممکن ہو سکے تاکہ بے روزگاری میں کمی اور اقتصادی ڈپریشن سے نمٹنے. پاکستان ٹیکسٹائل ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن (پی ٹی ای اے) کے پیٹرن چیف خرم مختار نے دی نیوز سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی 250 سے زائد ٹیکسٹائل کمپنیوں نے نمائش میں شرکت کی اور توقع ہے کہ پاکستان کو اگلے تین سے چار ماہ میں 500 ملین ڈالر کے ایکسپورٹ آرڈر مل جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت اس موقع سے فائدہ اٹھاتے ہوئے جلد از جلد ریفنڈز کرے تاکہ برآمد کنندگان کو درپیش ورکنگ کیپیٹل کی کمی کو دور کیا جا سکے۔ خرم مختار کے مطابق حکومت نے گزشتہ ہفتے 25.9 ارب روپے کے ریفنڈز جاری کیے لیکن 50 ارب روپے کے ریفنڈز ابھی باقی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ سیلز ٹیکس، انکم ٹیکس، ڈی ایل ٹی ایل، ٹی یو ایف، اور مارک اپ سپورٹ سکیم کے 150 ارب روپے کے موخر ریفنڈز ابھی بھی زیر التوا ہیں۔



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں