13

لازمی اسلامی تعلیم دینے کی قراردادیں منظور کی گئیں۔

اسلام آباد:


پیر کو سینیٹ نے دو قراردادیں متفقہ طور پر منظور کیں جن میں پرائمری سے لے کر اعلیٰ سطح تک کے تعلیمی اداروں میں قرآن پاک، سنت اور سیرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا علم حاصل کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔

دونوں قراردادیں جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق احمد نے پیش کیں اور کہا کہ یہ دونوں آئینی دفعات کے مطابق ہیں۔

پہلی قرارداد پیش کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ حقیقت ہے کہ ایک مثالی معاشرے کے مذہبی، سیاسی، معاشی، سماجی اور دیگر پہلوؤں کے حصول کے لیے قرآن و سنت کا گہرائی سے علم ہونا لازمی ہے۔

انہوں نے کہا کہ یونیورسٹیاں اور کالج پرعزم، پیداواری اور اچھے انسانوں کی تیاری کی نرسری ہیں، جو آخرکار معاشرے میں صحت مند، ترقی پسند اور اخلاقی سماجی نظم کے حصول میں اپنا کردار ادا کرتے ہیں۔

قرارداد میں اس بات کا اعادہ کیا گیا کہ "قرآن اور سنت کے الہٰی علم سے مستفید ہونے والا فرد حقیقی معنوں میں پاکستان کی ترقی و ترقی میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔”

مزید پڑھ: شرعی عدالت نے کم عمر لڑکی کی شادی پر از خود نوٹس لے لیا۔

اس نے صوبہ پنجاب میں اٹھائے گئے اس اقدام کو سراہا جہاں تمام پبلک سیکٹر یونیورسٹیوں میں مکمل طور پر علم اور سیکھنے کے مقاصد کے لیے قرآن پاک کی ترجمے کے ساتھ تعلیم کو لازمی قرار دیا گیا ہے۔

ترجمہ کے ساتھ قرآن پاک کی تعلیم تاجوید اور تفسیر پاکستان کی تمام یونیورسٹیوں میں تمام شعبوں کے طلباء کے لیے اسے امتحانات کا حصہ بنائے بغیر یا اضافی نمبروں کی فراہمی کو لازمی قرار دیا جائے تاکہ (ایک) قرآن پاک کے سیکھنے اور علم کے حصول پر توجہ مرکوز رہے۔

دوسری قرارداد میں کہا گیا: "یہ ایوان انسانی زندگی کے تمام پہلوؤں سے متعلق انفرادی اور اجتماعی ترقی کے لیے حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات طیبہ کے مطالعہ سے منسلک اہمیت کو تسلیم کرتا ہے۔ سیرت النبی صلی اللہ علیہ وسلم کے گہرے مطالعہ اور ادراک کے بغیر نئی نسل جدید دور کے چیلنجز اور اپنی انفرادی اور اجتماعی زندگی میں پیشرفت کا ادراک نہیں کر سکتی۔

اس میں کہا گیا کہ ایوان اس حقیقت سے واقف ہے کہ موجودہ نظام تعلیم میں مختلف درجوں پر حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی کا کوئی خصوصی اور تفصیلی مطالعہ نہیں کیا گیا ہے۔

نوجوان نسل کے ذہنوں میں سیرت النبی صلی اللہ علیہ وسلم کا مفصل اور جامع علم پیدا کرنے کے لیے ایوان نے وفاقی حکومت سے سفارش کی کہ وہ سیرت النبی صلی اللہ علیہ وسلم کو متعارف کرانے کے لیے فوری اقدامات کرے۔ PBU) ایک خصوصی مضمون کے طور پر اور اسے اسلام آباد میں پرائمری، مڈل، سیکنڈری اور ہائیر اسکول کی سطحوں پر لازمی بنائیں۔

اس کے علاوہ قرارداد میں تجویز دی گئی کہ اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری میں یونیورسٹی کی سطح پر تمام شعبوں میں سیرت رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے مطالعہ کو ایک خصوصی مضمون بنایا جائے۔

اس نے وفاقی حکومت سے یہ بھی کہا کہ وہ تمام صوبوں کے ساتھ ہم آہنگی پیدا کرے تاکہ پرائمری، مڈل، سیکنڈری، ہائر سیکنڈری اور یونیورسٹی کی سطحوں پر سیرت النبی صلی اللہ علیہ وسلم کے تفصیلی مطالعہ کو بطور خصوصی مضمون متعارف کرانے کے انتظامات کیے جائیں۔



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں