10

ریاست کے خلاف لڑنے والے ‘باغی’ ہیں: مفتی تقی عثمانی

اسلام آباد:


معروف عالم دین مفتی محمد تقی عثمانی نے پیر کے روز ایک بیان جاری کیا۔ فتویٰ (حکمنامہ) کہ ریاست پاکستان کے خلاف کوئی بھی مسلح سرگرمی "بغاوت” اور "حرام” ہے اور اسلامی قانون کے مطابق ممنوع ہے۔

کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی)، جو پاک فوج کے خلاف لڑ رہے ہیں اور ریاست مخالف سرگرمیوں میں ملوث ہیں، "باغی” ہیں، انہوں نے ‘پرتشدد انتہا پسندی کا مقابلہ کرنے کے لیے پائیگام پاکستان نیشنل کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا۔ , بنیاد پرستی اور نفرت انگیز تقاریر کا اہتمام بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی اسلام آباد نے اپنے فیصل مسجد کیمپس اسلام آباد میں کیا۔

کانفرنس میں موجود تمام مکاتب فکر کے علمائے کرام و مشائخ نے بھی اس حکم نامے کو متفقہ طور پر منظور کیا۔

مفتی تقی عثمانی نے کہا کہ کابل میں اپنی ملاقاتوں کے دوران ایک وفد کی سربراہی کرتے ہوئے افغان طالبان نے بھی ٹی ٹی پی کے عناصر کے خلاف اپنی ناراضگی کا اظہار کیا، جو پاکستان میں دہشت گردی کی کارروائیاں کر رہے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ قومی سلامتی کے اداروں کے خلاف لڑنا اور ریاست مخالف سرگرمیاں کرنا بغاوت کے زمرے میں آتا ہے اور اس کا جہاد سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

اسلامی نظریاتی کونسل کے چیئرمین ڈاکٹر قبلہ ایاز نے کہا کہ آرمی پبلک سکول کے افسوسناک واقعے نے پوری قوم کو دہشت گردی کی لعنت سے نمٹنے کے لیے ایک پلیٹ فارم پر جمع کر دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ علمائے کرام، مشائخ اور مذہبی سکالرز کی مدد سے حکومت نے ملک میں امن و آشتی کے لیے مواصلاتی خلاء کو ختم کرنے اور مذہبی اختلافات کو دور کرنے کے لیے "پیغام پاکستان” کی شکل میں ایک متفقہ پالیسی تیار کی۔

انہوں نے تجویز پیش کی کہ ‘پیغام پاکستان’ کو پارلیمنٹ کا آئینی احاطہ دیا جائے تاکہ اسے نچلی سطح پر نافذ کیا جائے۔

یہ بھی پڑھیں: اعلیٰ مذہبی اسکالرز نے دہشت گردی کے خلاف متفقہ فتویٰ جاری کیا۔

وزیر اعظم کے خصوصی نمائندہ برائے بین المذاہب ہم آہنگی اور مشرق وسطیٰ حافظ محمد طاہر محمود اشرفی نے کہا کہ سیاسی عدم استحکام ملک میں معاشی بدحالی کا ایک اہم سبب ہے۔

انہوں نے میڈیا پر زور دیا کہ وہ ذمہ دارانہ کردار ادا کریں اور جعلی خبروں کو شائع یا نشر کرنے سے گریز کریں کیونکہ اس سے کاروباری سرگرمیاں بری طرح متاثر ہوتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بعض عناصر ایسے ہیں جو انتشار پھیلانا چاہتے ہیں لیکن علمائے کرام اور مشائخ نے امن و سلامتی کے خلاف دشمن کے مذموم عزائم کو ناکام بنانے کا عہد کیا ہے۔

مرکزی رویت ہلال کمیٹی کے چیئرمین مولانا سید محمد عبدالخبیر آزاد نے کہا کہ ’’پیغام پاکستان‘‘ نے قوم کو متحد کیا ہے اور یہ ملک کی ترقی اور خوشحالی میں تعمیری کردار ادا کر رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ علمائے کرام اور مشائخ پاک فوج اور دیگر سیکیورٹی اداروں کے ساتھ کھڑے ہیں، اور وہ دشمن کے ایجنڈے کا مقابلہ کر رہے ہیں۔

سابق وزیر مذہبی امور حامد سعید کاظمی نے کہا کہ نوجوانوں کے ذہنوں کو آلودہ کرنے والے "ماسٹر مائنڈز” کو پکڑنے کے لیے انہیں اجتماعی کوششیں کرنا ہوں گی۔

علامہ افتخار نقوی نے کہا کہ "پیغام پاکستان” کے مثبت نتائج برآمد ہو رہے ہیں اور ملک کے ہر کونے میں عوام کو اس سے آگاہ کرنے کے لیے ٹھوس کوششوں کی ضرورت ہے۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عمران خان اقتدار پر قبضہ کرنے کے لیے معاشرے میں پولرائزیشن کو فروغ دے رہے ہیں۔

ضیاء اللہ شاہ بخاری نے کہا کہ کچھ عناصر سوشل میڈیا پر فرقہ واریت کو ہوا دے رہے ہیں اور ان کا مقابلہ بات چیت کے ذریعے کیا جا سکتا ہے یا بصورت دیگر قانونی کارروائی کی جا سکتی ہے۔

مولانا فضل الرحمان خلیل نے کہا کہ ہمیں پاکستان اور افغانستان کے علمائے کرام کے درمیان خلیج کو پر کرنے کے لیے ٹھوس کوششیں کرنی چاہئیں۔

علامہ حسین اکبر نے کہا کہ نوجوان نسل کی تعلیم کے لیے "پیغام پاکستان” کو قومی نصاب کا حصہ ہونا چاہیے۔

یہ بھی پڑھیں: ٹی ٹی پی کو بے اثر کرنے کے لیے اسلام آباد کابل کے ساتھ خاموش سفارت کاری میں

انہوں نے کہا کہ "پیغام پاکستان” کی ایک کاپی ملک بھر کے مقامی حکومتی اداروں کو فراہم کی جانی چاہیے تاکہ اسے نچلی سطح پر مزید نافذ کیا جا سکے۔

ڈاکٹر راغب نعیمی، ڈاکٹر عطا الرحمان، علامہ توقیر عباس، مفتی نعمان نعیم، مفتی گلزار احمد نعیمی، پیر سید علی رضا، مفتی منیب الرحمان، قاری محمد حفیظ جالندھری، محمد عادل عطاری، پیر چراغ الدین شاہ، مولانا حامد الحق حقانی، مولانا طیب قریشی، پیر حسان حسیب الرحمان، مولانا زاہد راشدی، یاسین ظفر، پیر محمد اظہر سعید، پیر خالد سلطان باہو، سینیٹر ساجد میر، مفتی عبدالرحیم اور وزیر منصوبہ بندی احسن اقبال نے بھی اس موقع پر اظہار خیال کیا۔



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں