9

دس منٹ کی سی ٹی اسکین سے بلڈ پریشر کی عام وجہ اور علاج میں کامیابی

برطانیہ کے تین اداروں نے مشترکہ طور پر صرف دس منٹ کے اسکین سے ایڈرینل غدود کے اوپر باریک ابھار کو ختم کرکے بلڈ پریشر کا مستقل علاج کا کامیاب انسانی تجربہ کیا ہے۔ فوٹو: فائل

برطانیہ کے تین اداروں نے مشترکہ طور پر صرف دس منٹ کے اسکین سے ایڈرینل غدود کے اوپر باریک ابھار کو ختم کرکے بلڈ پریشر کا مستقل علاج کا کامیاب انسانی تجربہ کیا ہے۔ فوٹو: فائل

کیمبرج: انسانی جسم میں ہارمون کے بعض غدود کی سرگرمی سے مستقل بلڈ پریشر کا عارضہ لاحق رہتا ہے۔ اب برطانوی ماہرین نے صرف 10 منٹ کے سی ٹی اسکین سے ان غدود کی شناخت اور علاج کا بالکل نیا طریقہ دریافت کیا  ہے۔

کوئن میری ہسپتال، جامعہ کیمبرج اور بارٹس ہسپتال کے ڈاکٹرون نے ایک نئی قسم کا سٹی ٹی اسکین وضع کیا ہے جو ہارمون کے غدود پر بڑھنے والے ریشوں پر روشنی پھینک سکتا ہے اور پھر انہیں نکال باہر کرکے بلند فشارِ خون (ہائی بلڈ پریشر) کا علاج کیا جاسکتا ہے۔

یہ تحقیق نیچر میڈیسن میں شائع ہوئی ہے جس نے طب کو درپیش 60 سالہ مسئلہ حل کردیا ہے۔ ہائی بلڈ پریشر میں مبتلا 20 میں سے ایک مریض کے انہی غدود پر یہ ابھار (نوڈیولز) ہوتے ہیں۔ اس سے قبل ڈاکٹر ان کی تشخیص اور نکال باہر کرنے کی سرتوڑ کوششیں کرتے رہے اور ناکامی کا منہ دیکھنا پڑا۔

اس مطالعےمیں شامل افراد اوسطاً 128 ہائی بلڈ پریشر کے شکار تھے اور اسٹرائیڈ ہارمون کی وجہ سے ایسا ہورہا تھا۔ ماہرین نے سی ٹی اسکین کی مدد سے دیکھا کہ دو تہائی مریضوں میں ’ایلڈوسٹیرون‘ ہارمون کا افراز کچھ زیادہ ہے جو ان کے بدن کے ایک غدے (گلینڈ) سے آرہا تھا جسے ایڈرینل گلینڈ کہا جاتا ہے۔ ماہرین نے اس گلینڈ کے اوپر باریک ابھار نوٹ کئے۔ جب ان ابھار کو نکالا گیا تو مریضوں کا بلڈ پریشر قابو میں آنے لگا۔

لیکن وضع کردہ طریقہ بہت پیچیدہ اور بالکل نیا بھی ہے۔ اسکین کے دوران ایک تابکار (ریڈیو ایکٹو) ڈائی ’میٹومائڈیٹ‘ غدے پر ڈالی جاتی ہے جو باریک ابھار سے چپک کر روشنی خارج کرکے اس کی نشاندہی کرتی ہے۔ پھر اسے کامیابی سے نکال باہر کیا جاتا ہے۔ یہ طریقہ روایتی علاج کے مقابلے میں تیربہدف اور مؤثر ثابت ہوا ہے جس میں وقت کم لگتا ہے اور تکلیف بھی کم کم ہوتی ہے۔

اس سے قبل ایڈرینل غدود کے ابھار کو عام سی ٹی اسکین سے دیکھنے میں 99 فیصد ناکامی کا سامنا تھا۔ تاہم کئی برس کی محنت کے بعد اب بلڈ پریشر کی اس عجیب وغریب قسم میں مبتلا افراد کا کامیاب علاج کرنا ممکن ہے۔

کل 18 مریضوں پر اسے کامیابی سے آزمایا گیا ہے اور یوں اسے انسانوں پر بڑے پیمانے پر استعمال کیا جاسکتا ہے۔





Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں