9

جامعہ حقانیہ کے علمائے کرام تحقیقی مقالوں کا دفاع کرتے ہیں۔

نوشہرہ: دارالعلوم حقانیہ اکوڑہ خٹک میں تحقیقی مقالات کے دفاع کے سلسلے میں منعقدہ تین روزہ تقریبات جمعرات کو اختتام پذیر ہوگئیں۔

ممتاز عالم دین مولانا انوار الحق نے تقریبات کی نگرانی کی جہاں محققین اور طلباء نے مختلف مذہبی موضوعات پر اپنے مقالے پیش کیے۔

علمائے کرام کے حلقوں نے دارالعلوم حقانیہ میں اس میگا ایونٹ کے انعقاد کو سراہتے ہوئے اسے دینی تعلیم کے فروغ کی جانب ایک تاریخی قدم قرار دیا ہے۔

طلباء نے اپنے تحقیقی کام کا کامیابی سے دفاع کیا اور علمائے کرام، اساتذہ اور ساتھی طلباء کی گرج چمک سے داد وصول کی۔

تیسرے روزہ اجلاس کی صدارت جامعہ حقانیہ کے نائب ناظم مولانا حامد الحق حقانی، مولانا عبدالقیوم حقانی، مولانا راشد الحق سمیع اور مولانا فیض الرحمن نے کی۔

مفتی فواد اللہ قاسمی ریسرچ فور اسکالرز کے خارجی ممتحن تھے جب کہ جامعۃ الرشید کراچی کے مذہبی اسکالرز مولانا مفتی اسد اللہ شہباز، مولانا مفتی شاہد خان، مولانا فرمان اللہ مروت، امام جامع مسجد مہابت خان پشاور اور خیبر پختونخوا کے خطیب مولانا مفتی شاہد تھے۔ طیب قریشی، پروفیسر ڈاکٹر محمد نعیم حقانی اور دارالعلوم حقانیہ کے اساتذہ نے شرکت کی۔

مولانا حامد الحق حقانی نے مہمانوں کا استقبال کیا جبکہ مولانا طیب قریشی نے صوبہ، پاکستان اور افغانستان اور دنیا کے دیگر حصوں میں اسلامی دینی تعلیم کے فروغ کے لیے دارالعلوم حقانیہ کی تاریخ اور خدمات پر روشنی ڈالی۔

مقررین نے اسلامی دینی تعلیم کے فروغ اور ملک میں نفاذ شریعت کے لیے جدوجہد کرنے پر مولانا سمیع الحق کی تعریف کی۔



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں