13

تاجروں نے KKH پر غیر قانونی تعمیرات گرانے کا کہا

مانسہرہ: نیشنل ہائی وے اتھارٹی (این ایچ اے) نے سینکڑوں تاجروں اور مارکیٹ مالکان کو شاہراہ قراقرم پر قائم غیر قانونی تعمیرات کو رضاکارانہ طور پر مسمار کرنے کے نوٹسز جاری کر دیے ہیں بصورت دیگر تجاوزات کے خلاف مہم کے ذریعے ایسی جائیدادیں مسمار کر دی جائیں گی۔

"ہم KKH کے ساتھ شنکیاری سے چٹرپلان کے علاقے تک انسدادِ تجاوزات مہم شروع کرنے جا رہے ہیں اور تجاوزات کرنے والوں کو نوٹس جاری کیے ہیں کہ وہ اپنی عمارتوں کو شریان کے دائیں طرف آنے والی تجاوزات والی زمین پر گراؤنڈ کریں، بصورت دیگر یہ عمارتیں 22 جنوری تک مسمار کر دی جائیں گی۔ بھاری مشینیں،” اسسٹنٹ ڈائریکٹر این ایچ اے سعید الرحمان نے بدھ کو یہاں شنکیاری میں صحافیوں کو بتایا۔

"ہم اس اسٹریٹجک شریان کو مجموعی طور پر 44 فٹ تک چوڑا کریں گے کیونکہ اس کے مرکز سے ہائی وے کا ہر ایک حصہ 22 فٹ چوڑا ہوگا تاکہ ٹریفک کی ہموار روانی کو یقینی بنایا جاسکے اور دونوں طرف کے مقامی لوگوں کی طرف سے NHA کی زمین کو واپس حاصل کیا جاسکے۔” کہا.

اسسٹنٹ ڈائریکٹر کے مطابق، NHA کی ایک ٹیم نے KKH کے ساتھ شنکیاری سے چٹرپلان تک، پڑوسی ضلع بٹگرام کے ساتھ ایک حدودی علاقہ کے ساتھ تجاوزات کرنے والوں کو نوٹس جاری کرنے سے پہلے متعلقہ محکمے سے بھی مشورہ کیا۔

انہوں نے کہا، "ضلعی انتظامیہ، پولیس، ریونیو اور دیگر محکمے بھی اس آپریشن کا حصہ ہوں گے، جس کی تیاریوں کو پہلے ہی حتمی شکل دی جا چکی ہے۔”

دریں اثناء ڈپٹی کمشنر بلال شاہد نے منقطع محکموں کے سربراہان کو سختی سے تنبیہ کی ہے کہ وہ دل و جان سے لوگوں کی خدمت کریں۔

انہوں نے اسسٹنٹ کمشنرز اور سربراہان کی ایک میٹنگ میں کہا کہ میں ذاتی طور پر آپ کے محکموں کی کارکردگی کی نگرانی کرتا رہا ہوں لیکن میں چاہتا ہوں کہ آپ لوگوں کو درپیش مسائل کو حل کرنے اور گڈ گورننس کے ذریعے انہیں ریلیف دینے کے لیے اپنی ذمہ داریاں پوری ایمانداری سے ادا کریں۔ یہاں پبلک سیکٹر کے مختلف محکمے۔



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں