7

آئی جی نے پولیس سے کہا کہ وہ پریشان حال لوگوں میں آسانی تقسیم کریں۔

لاہور (خبر نگار) انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب عامر ذوالفقار خان نے کہا ہے کہ پولیس سروس ایک مقدس پیشہ ہے جس میں اللہ تعالیٰ نے ہمیں عوام کے مسائل حل کرنے کی ذمہ داری سونپی ہے جو کہ ہمیں خلوص، ایمانداری اور فرض شناسی کے ساتھ نبھانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ماضی میں بہت سے اولیاء اللہ کہا کرتے تھے کہ ’’اچھا کرو، اچھا کرو‘‘ اس لیے ہمیں بھی نیکی کرنے والے بننا چاہیے اور مصیبت زدہ لوگوں میں آسانییں بانٹنی چاہیے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے پیر کو ایلیٹ ٹریننگ سنٹر بیدیاں میں اپنے اعزاز میں دیے گئے استقبالیہ میں افسران و اہلکاروں سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔عامر ذوالفقار خان نے کہا کہ پوری فورس شہریوں کی خدمت کو اپنا نصب العین سمجھے اور وعدہ کرے کہ اپنی ڈیوٹی ختم کرنے سے پہلے ہر اس دن پانچ مصیبت زدہ لوگوں کی دعائیں لے کر ان کے مسائل حل کر کے گھر جائیں کیونکہ مصیبت زدہ اور مظلوم کی دعائیں اہم ہیں اور ان کی دعا اور لعنت اللہ رب العزت کے پاس جاتی ہے اور پھر ہم میں سے کوئی بھی اللہ کے عمل سے نہیں بچ سکتا۔ اس لیے لوگوں کے مسائل حل کرنے والے بنیں، رب آپ کے مسائل حل کرنے کا خیال رکھے گا۔

محنت میں عظمت ہے، مجھے اس وقت فخر محسوس ہوتا ہے جب آپ اپنی بہترین کارکردگی سے محکمے کا امیج بہتر کریں گے، انہوں نے مزید کہا کہ آئی جی پنجاب نے کہا کہ مجھ سمیت پولیس فورس میں شامل ہونے والا ہر افسر عوامی خدمت گار ہے اور ہمیں اس کو پورا کرنا ہے۔ محنت، لگن اور فرض کے احساس کے ساتھ ذمہ داری۔ انہوں نے کہا کہ اپنے آپ کو ان پریشان حال کی جگہ پر رکھو جو تھانوں میں آکر ان کے دکھ درد کو محسوس کریں اور ان کے مسائل کے حل میں کوئی کسر اٹھا نہ رکھیں۔

عامر ذوالفقار خان نے کہا کہ ہمیں اپنے اندر کے بچے کو کبھی مرنے نہیں دینا چاہیے کیونکہ اچھا افسر وہی ہوتا ہے جس میں انسانیت زندہ ہو۔ انہوں نے کہا کہ ہم سب اپنی تنخواہ شہریوں کے ٹیکسوں سے حاصل کرتے ہیں لہٰذا شہریوں کی بے لوث خدمت، عزت اور احترام ہم سب پر فرض ہے۔

2014 میں سب انسپکٹر کے طور پر پولیس فورس میں شامل ہونے والے نوجوان افسران نے آئی جی پنجاب عامر ذوالفقار خان کی قیادت میں پولیس ٹریننگ کالج سہالہ میں اپنی تربیت مکمل کی تھی جب وہ کمانڈنٹ پولیس ٹریننگ کالج سہالہ تھے۔

ان نوجوان افسران نے ایلیٹ ٹریننگ سنٹر بیدیاں میں سابق کمانڈنٹ کے اعزاز میں ایک استقبالیہ کا اہتمام کیا جس سے خطاب کے دوران آئی جی پنجاب نے انہیں اہم ہدایات جاری کیں۔

آئی جی پنجاب نے کہا کہ میرے زیادہ تر زیر تربیت نوجوان افسران اب پنجاب بھر میں ایس ایچ اوز اور انچارج انویسٹی گیشن کے طور پر خدمات سرانجام دے رہے ہیں لیکن مجھے امید ہے کہ آپ لوگوں کی خدمت پہلے سے زیادہ جذبے سے کر کے میرا فخر کریں گے۔ آئی جی پی نے کہا کہ سب انسپکٹرز کی محکمانہ ترقی کے لیے قوانین پر عمل درآمد کیا جائے گا تاکہ اہل افسران بلا تاخیر ان کا جائز حق حاصل کر سکیں۔

آئی جی نے کہا کہ میری ذمہ داری ہے کہ ہر ممکن اقدامات کرکے آپ کی محکمانہ ترقی کی راہ ہموار کروں کیونکہ اگر میں یہ نہیں کر سکتا تو شاید کوئی اور افسر بھی نہ کر سکے۔ آئی جی پنجاب نے اپنے پی ایس او کو ہدایت کی کہ وہ سب انسپکٹرز سے ملاقات کے بعد ایک گروپ بنا کر سب انسپکٹرز کے مسائل کے بارے میں پریزنٹیشن تیار کر کے مجھے جلد پیش کریں تاکہ اس سلسلے میں عملی اقدامات کیے جا سکیں۔

سب انسپکٹرز نے آئی جی پنجاب عامر ذوالفقار خان کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ آپ کی زیر نگرانی تربیت حاصل کرنا ہمارے لیے اعزاز سے کم نہیں۔ انہوں نے آئی جی پنجاب کی طرف سے دی گئی ہدایات کے پیش نظر کارکردگی کو مزید بہتر بنانے کے عزم کا اظہار کیا۔ اس موقع پر سب انسپکٹرز نے مختلف مسائل پیش کیے جس پر آئی جی نے موقع پر ہی ان کے ازالے کے احکامات جاری کیے۔



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں